اداکارہ شبنم سے گینگ ریپ کرنےوالا تحریک انصاف میں شامل

shabnam

لاہور( مانیٹرنگ ڈیسک)ماضی کی سپر سٹار اداکارہ شبنم کے ساتھ ان کے شوہر اور بیٹے کے سامنے گینگ ریپ کرنے والا فاروق بندیال پاکستان تحریک انصاف میں شامل۔ تفصیلات کے مطابق خوشاب سے تعلق رکھنے والے سیاستدان ملک فاروق بندیال نے باضابطہ طور پر پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کر لی ہے اور ان کی اس سلسلہ میں عمران خان سے ملاقات بھی ہو چکی ہے۔ مگر ان کا شرمناک ماضی ان کے ساتھ ابھی تک جوڑا ہوا ہے۔

بہت کم لوگ جانتے ہیں کہ اداکارہ ریشم انہی فاروق بندیال کی وجہ سے شوبز انڈسٹری سے علیحدہ اور بنگلہ دیش منتقل ہو گئی تھیں۔ یہ بات ہے جنرل ضیا الحق کے مارشل لا کی ہے جب وطن عزیز بدترین سنسر شپ کا سامنا کر رہا تھا۔ ایک رات روبن گھوش کے گھر پر فاروق بندیال ( اس وقت کے چیف سیکرٹری پنجاب اے کے بندیال کے بھتیجے) ان کے رئیس زادے بگڑے ہوئے دوستوں نے ہلہ بول دیا۔ نشے میں دھت قوم کے نوجوان سپوتوں نے روبن گھوش، ان کے بیٹے کو باندھ دیا اور شوہر بیٹے کے سامنے اداکارہ ریشم کیساتھ گینگ ریپ کر کے فرار ہو گئے۔ پولیس پر دباؤ ڈال کر ڈکیتی کا پرچہ کاٹا گیا۔

خبر اخبارات میں تو شائع نہ ہو سکی لیکن اڑتی اڑتی جنرل ضیا الحق تک پہنچ گئی جنہوں نے حکم دیا کہ ملزمان پر ریپ کا پرچہ حدود آرڈیننس کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا جائے۔ آخر ملزمان گرفتار کیے گئے۔خصوصی عدالت میں مقدمے کی سماعت ہوئی۔ حدود آرڈیننس کے تحت ہی ملزمان کو سزائے موت دی گئی۔ مگر اسٹیبلشمنٹ کا پریشر بہت زیادہ ہوا تو ضیاء الحق نے بھی گھٹنے ٹیک دیئے۔

اداکارہ شبنم جن کی پاکستانی فلم انڈسٹری کیلئے خدمات کسی سے پوشیدہ نہیں ان کی فیملی کو ایک ایسے کرب سے گزرنا پڑا جو ناقابل بیان ہے۔ روبن گھوش نے اپنے بیٹے کو امریکہ بھیج دیا اور اداکارہ شبنم نے عہد کیا کہ وہ اس مجرموں کو ہر حال میں سزا دلوائیں گی مگر جنرل ضیا الحق اسٹیبلشمنٹ کے پریشر میں آ گئے اور بالآخر ایک رات حکومت کے چند بڑے بڑے لوگ شبنم کے گھر پہنچ گئے۔ صلح کے لیے دباؤ ڈالا گیا۔ شبنم اور رابن گھوش سے معافی نامے پر دستخط کروائے گئے اور سزائے موت کو معمولی سزا میں بدل دیا گیا۔

آج وہی ملک فاروق بندیال پورے دھڑلے سے پاکستان کی ایک بڑی جماعت میں شامل ہوئے ہیں اور پی ٹی آئی کے چیئرمین بھی انہیں کھلے دل سے خوش آمدید کہہ رہے ہیں۔ فاروق بندیال جیسے ان گنت لوگوں کی اس پارٹی میں شمولیت سے ملک کے مستقبل پر بہت سے سوالات پیدا ہوگئے ہیں۔

Author: admin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.