سیاسی گرما گرمی۔ طیبہ ضیا

tayybia

عمران خان اپنی اہلیہ کے ہمراہ عمرہ سے واپس وطن پہنچ گئے ہیں۔ ماضی میں جب ریحام خان کے ساتھ عمرہ پر گئے تھے تب بھی میڈیا ریٹنگ ہائی رہی اور حالیہ بیگم کے ساتھ عمرہ کی ریٹنگ بھی بہت ہائی رہی۔
عمران خان سر زمین مدینہ پاک جوتوں کے بغیر داخل ہوئے ، ان کی عقیدت بجا۔ افسوس کہ نواز شریف اوردیگر سیاسی قائدین کی طرح پی ٹی آئی والے اپنے قائد کو بھی مذہبی دیوتا بنا کر پیش کرنا چاہتے ہیں۔ پاکستان میں مذہبی ایکس پلا ئیٹ کرنے کا سیاسی کلچر پرانا ہے۔ مذہب کے نام پر جذباتی بلیک میلنگ نے پاکستان کو بہت استعمال کیا ہے۔بہت نقصان پہنچایا ہے۔ پہلے لیڈران کے بت بناتے ہیں پھر امیدیں بر نہ آنے پر ان کی کردار کشی شروع کر دیتے ہیں۔اللہ خان کو کارکنوں کے ہاتھوں ذلیل ہونے سے بچائے۔گورنر مکہ خود عمران خان کو رخصت کرنے جدہ ایئرپورٹ پرموجود تھے۔سعودی عرب میں عمران خان کوسرکاری پروٹوکول دیا گیا۔سعودی الیکشن سے پہلے ہی پاکستان میں سیاسی ہوا کا رخ بھانپ گئے ہیں۔نواز شریف بھی سعودی عرب کے لاڈلے رہ چکے ہیں۔ سب کو باری ملنی چاہئے۔ عمران خان کو بلوا آگیا۔ نواز شریف کو اس سال آخری عشرہ کا بلاوا نہ آسکا۔عروج سدا نہیں رہتا۔ پاکستان میں جس نے بھی فرعون بننے کی کوشش کی، منہ کے بل گرا۔“

چیف جسٹس میرا کیس منگوا کر پھانسی دیدیں یا جیل بھیج دیں، ”نواز شریف نے درست کہا ہے۔نواز شریف کے مقدمات کو اتنا لٹکانے کی حکمت سمجھ میں نہیں آئی۔عوام بھی لسی میں مدانی کی اس طویل کاروائی سے اکتا چکے ہیں ، انہیں کرپشن کا انجام دیکھنے کا بے صبری سے انتظار ہے۔سابق وزیراعظم نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث نے نیب ریفرنسز میں اپنا وکالت نامہ واپس لے لیاہے۔ اس سے بھی شکوک شبہات میں اضافہ ہوا ہے۔ شیخ رشید کے مطابق اسٹیبلشمنٹ کے خلاف محاز آرائی الیکشن کے لئے چال ہے ورنہ یہ لوگ ڈیل کے لئے ترلہ پالیسی اپنائے ہوئے ہیں۔سابق صدر جنرل مشرف نے کہا ہے کہ نواز شریف اور آصف زرداری ماضی کے کردار کی وجہ سے فوجی حلقوں میں پسندنہیں کئے جاتے۔میر انہیں خیال کہ فوج عمران خان کے پیچھے ہے“۔ ان کا کہنا تھا کہ فوج کی اپنی پسند اورنا پسند ہوتی ہے۔مسلم لیگ ن ، نواز شریف اور آصف زرداری کا ملک مخالف کرداراصل مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ میرا خیال ہے کہ ریحام خان مسلم لیگ ن کے ہاتھوں میں کھیل رہی ہیں۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے الزام عائد کیا ہے 2013ءکے عام انتخابات میں فوج نے نوازشریف کی مدد کی،وہ مجھے فوج کا لاڈلہ کہتے ہیں جبکہ ماضی میں وہ خود بھی لاڈلے رہے ہیں، اب عدلیہ اور فوج نیو ٹر ل ہو گئی ہیں تو نواز شریف کو تکلیف ہو رہی ہے۔عمران خان نے الزام عائد کیا کہ 2013ءکے انتخابات میں اس وقت کے ایک بریگیڈئر نے نواز شریف کی بہت مدد کی تھی۔ آج نواز شریف یہ شکایت نہیں کر رہے کہ فوج مخالف ہے بلکہ شکایت یہ ہے فوج ان کی حمایت کیوں نہیں کر رہی ہے۔ 1989ءسے نواز شریف پر کرپشن کے کیسز ہیں نواز شریف قوم کے مجرم ہیں۔

نواز شریف کے دیرینہ ساتھی چوہدری نثار نے بھی فیصلہ سنا دیا ہے۔ان کے اور ن لیگ کی قیادت کے درمیان اختلافات شدت اختیار کرتے جارہے ہیں اور انہوں نے ٹکٹ کیلئے درخواست نہ دینے فیصلہ کرتے ہوئے الیکشن آزاد حیثیت میں لڑنے کا ارادہ کر لیاہے۔گزشتہ روز پرویز رشید نے چوہدری نثار پر تنقیدکرتے ہوئے کہا تھا کہ چوہدری نثار کی سازش ناکام بنانے کیلئے میں نے وزارت چھوڑی ، چوہدری نثار مجھے نوازشریف سے دور نہیں کر سکتے ، مریم نواز نے پارٹی کو سہارا دیا جب چوہدری نثار غداری کر رہے تھے۔ انہو ںنے کہا کہ چوہدری نثار نے ن لیگ کی اینٹیں لگائیں نہ ہی چوری کر سکے جس پر اب چوہدری نثار خود میدان میں آ گئے ہیں اور انہوں نے پرویز رشید کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا ہے کہ پرویز رشید نے پارٹی میں خوش آمد کو منشور کا حصہ بنایا ہے اور ان جیسے لوگ خوش آمد کی بد ترین مثال ہیں۔انہوں نے کہا کہ پارٹی غداروں نے(ن)لیگ پرسیکولرنظریہ مسلط کیااور ن لیگ کو فیملی پارٹی بنانے کے مشورے دیئے ۔ بشکریہ روزنامہ نوائے وقت

Author: admin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.